پاکستان پریس فاو ئنڈیشن نے چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس انور ظہیر جمالی سے اپیل کی ہے کہ متعلقہ حکام کو سینئر صحافی حامد میر پر ہونے والے حملے کی تحقیقاتی کمیشن کی سرکاری رپورٹ جاری کرنے کی ہدایات کی جائے

کراچی 12اپریل ، 2016:  حامد میر پر 19اپریل 2014کو ہونے والے قاتلانہ حملے کی تحقیقات کے لیے قائم کردہ کمیشن کی رپورٹ  لیک ہونے پر  پاکستان پریس فاوئنڈیشن کے سیکرٹری جنرل اویس اسلم علی  نے چیف جسٹس کو لکھے گئے مراسلے میں درخواست کی ہے کہ وہ متعلقہ حکام کو ہدایات جاری کریں کہ کمیشن  کی آفیشل رپورٹ جاری کی جائے کیونکہ رپورٹ لیک ہونے کی وجہ سے اس کی اہمیت کم ہوسکتی ہے۔
اویس اسلم نے اپنے مراسلے میں صحافی موسیٰ خان خیل  قتل کی  انکوائری کمیشن رپورٹ  لیک ہونے کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ لیک رپورٹ میں  مقتول صحافی؛بیڈ طالبان؛ کا سربراہ قرار دیا گیا تھا۔ اپنی ذمہ داریاں  انجام دیتے ہوئے دہشت گردی کا نشانہ بننے والے صحافی کو؛بیڈ طالبان؛ کا سربراہ قرار  دینا سراسر زیادتی ہے۔ انھوں نے چیف جسٹس سے درخواست کی  ہے کہ  موسیٰ خان خیل سے منسوب اس من گھڑت الزام کو علیحدہ کیا جائے۔  موسیٰ خان خیل کو 18فروری2009کو صحافتی سرگرمیاں انجام دیتے ہوئے اغوا کیا گیا اور بعد میں قتل کردیا گیا تھا۔

پاکستان پریس فاوئنڈیشن  ایک آزاد ادارہ ہے جو گذشتہ 5دہائیوں سے پاکستان اور بین الاقوامی سطح پر  آزادی صحافت کے لیے کام کررہا ہے۔

You May Also Like